سعودی اقامہ

گم شدہ یا چوری ہونے کے بعد سعودی اقامہ کے لئے درخواست دینے کا طریقہ کار

This post is also available in: English

کسی بھی ملک میں رہائش اختیار کرنے کے لئے رہائشی اجازت نامے کی ضرورت ہوتی ہے جس سے آپ کا اس ملک میں رہنا قانونی ہو جاتا ہے۔ ہر ریاست کے پاس طلباء ، ملازم کے اور ملک میں مقیم ان کے اہل خانہ کے لئے مختلف اجازت نامے اوراپنے قومی شناختی کارڈ زہوتے ہیں۔ اسی طرح سعودی عرب مملکت میں بھی مقیم سعودی غیر ملکیوں کے لئے رہائشی اجازت نامہ یا اقامہ موجود ہے۔

حال ہی میں, سعودی اقامہ فیس میں اضافے کے معاملے نے وہاں مقیم سعودی ایکسپٹ کے درمیان ہنگامہ برپا کردیا تھا, ان میں سے اکثریت زیادہ فیسوں کی وجہ سے مملکت چھوڑ گئی تھی تاہم حال ہی میں, اقتصادی ترقی 2019 کے قاعدے کے مطابق سعودی اقامہ فیس کو 300 / – سعودی ریال تک محدود کرنے کا ایک نیا حکمل پاس کیا گیا ہے۔

ہم نے اپنے مختلف مضامین میں ان پیشرفتوں پر تبادلہ خیال کیا ہے ، لیکن ان لوگوں کے لئے جو ابھی تک ملک میں مقیم ہیں اوران کا سعودی اقامہ یا رہائش کا اجازت نامہ کھو گیا ہے یا چوری ہوگیا ہے۔ قواعد و ضوابط کی روشنی میں دیر ہونے سے پہلے اس کا کوئی حل نکالنا بہت ضروری ہے۔



وہ سعودی ایکسپٹس جن کے سعودی اقامے کھو چکے ہیں یا ان کا رہائشی اجازت نامہ چوری ہوگیا ہے۔ان الجھے ہوئے سعودی ایکسپٹس کی مدد کے لئے ہم یہاں مختلف ہدایت نامے لکھ رہے ہیں جن کی پیروی کرنے کی ضرورت ہے۔ لہذا نیچے سکرول کریں اور اس کے بارے میں پڑھیں کہ آپ کو ان ہنگامی صورت حال میں جو امکانات منتخب کرنےہیں وہ کیا ہیں۔

متبادلات نکالنے کے لئے رہنما اصو لوں کے ٩ اقدامات

اگر مملکت میں مقیم سعودی عرب کا رہائشی اجازت نامہ یا سعودی اقامہ کھو گیا ہے تو, اس مسئلے کے لئے کہ اسے کس محکمے میں منتقل ہونا ہے اور اس کے بعد کیا کام انجام دینا ہے, پاسپورٹ ڈیپارٹمنٹ (سعودی جوازات) نے ٹویٹر پر ایک سرکاری بیان دیا . مقامی اخبار کے مطابق, آپ کو مختلف قانونی کارروائیوں کے ساتھ ایک ہزار ریال کی متبادل فیس بھی ادا کرنا ہوگی۔



کسی قسم کی گڑبڑ سے بچنے کے لئے کیا اقدامات کیے جائیں گے؟

سعودی جوازات کے مطابق, اگر وہ اپنا سعودی اقامہ کھو دیتے ہیں یا کسی حادثے کے باعث یہ چوری ہوجاتا ہے تو سعودی ایکسپٹس کو یہ نو (9) اقدامات اٹھانے چاہیے۔

  1. سعودی ایکسپیٹ کو سعودی جوازات کے دفتر یا پولیس کی کسی بھی برانچ میں گمشدگی کی رپورٹ درج کروانی ہوگی۔
  2. سعودی ایکسپیٹ کو اپنے اسپانسر / ملازم سے ایک خط وصول کرنا ہے جس میں یہ بتایاجائے کہ سعودی اقامہ کہاں اور کیسے کھویا ہے۔
  3. سعودی ایکسپٹ کا اصل پاسپورٹ جمع کروانا ہوگا۔
  4. اگر سعودی اقامہ کی ایک کاپی موجود ہے تو ، اسے بھی پیش کرنا ہوگا۔
  5. سعودی جوازات کے دفتر یا ویب سائٹ سے حاصل کردہ فارم پُر کریں۔
  6. داخلہ فارم ضرور پُر کرنا ہے۔
  7. اگر داخلہ کی مدت ایک سال یا اس سے کم ہے تو, 500 ریال کی فیس ادا کرنی ہوگی۔
  8. سعودی ایکسپیٹ کو دو تازہ تصاویر منسلک کرنی ہیں۔
  9. سعودی اقامہ غائب کرنے پرسعودی ریال 1,000 جرمانہ ادا کرنا ہے۔



سعودی ایکسپٹ پر اضافی سعودی ریال 1,000 جرمانہ کیوں ہے؟

اگر سعودی اقامہ کہیں غائب ہوگیا ہے تو 24 گھنٹوں کے اندر متعلقہ ادارے کو آگاہ کرنا ضروری ہے۔ اگر کوئی شخص رپورٹنگ میں تاخیر کرتا ہے ، تو اسے ایس آر1000 سے ایس آر 3000 جرمانہ ادا کرنا ہوگا۔

لہذا یہ ضروری ہے کہ سعودی اقامہ کی اہمیت کو سمجھا جائے اور اگر وہ ضائع ہوجائے توجلد از جلد اطلاع  دینا بہت ضروری ہے۔اورساتھ ہی احتیاطی تدابیر بھی اختیار کریں۔ زیادہ تر لوگ اس بات سے بے خبر ہیں کہ وہ کون سا طریقہ کار ہے جس کے نتیجے میں رپورٹنگ میں تاخیر ہوتی ہے ، جس کی وجہ سے سعودی جرمانے کی صورت میں اضافی رقم ادا کرنا پڑتی ہے لہذااس بلاگ کو اپنے دائرے میں پھیلائیں تاکہ ہر شخص اس طریقہ کار سے واقف ہوسکے ۔

عمومی سوالنامہ

کیا ہم آن لائن ابشر کے ذریعے سعودی اقامہ کو دوبارہ جاری کرسکتے ہیں؟

نہیں ، ہمیں سعودی جوازت آفس میں جاکر اور دوبارہ جاری کرنے کا ایک فارم بھر کر مناسب طریقہ کار کے ذریعہ کیس پیش کرنا ہوگا۔

اگر سعودی اقامہ گم ہو گیا ہے تو کیا پولیس اسٹیشن جانے کی ضرورت ہے؟

اگر آپ کا سعودی اقامہ گم ہو گیا ہے تو آپ کو پولیس اسٹیشن میں اطلاع دینے کی ضرورت ہے کیونکہ نیا سعودی اقامہ جاری کرنے کے لئے آپ کے دستاویزات کے ساتھ درج پولیس رپورٹ بھی ظاہر کرنا لازمی ہے

تازہ ترین خبریں: سعودی عرب کی حالیہ خبریں, حاصل کرنے کے لئے آپ ہمارے واٹس ایپ گروپ / فیس بک پیج میں شامل ہوسکتے ہیں ۔

Comment here